ہمیں فالو کریں
Banner
  • سالانه كتاب برائے عالمی مسابقت

انٹرنیشنل انسٹی ٹیوٹ برائے مینجمنٹ ڈویلپمنٹ جسكا ہیڈكوارٹر سویزرلینڈ كے شہر لوزان میں ہے سالانہ کتاب برائے عالمی مقابلہ شائع كرتی ہے تاکہ دیکھا جا سکے کہ قومیں اور کاروباری افراد خوشحالی یا منافع کے حصول کے لئے کس طرح انتظام کرتے ہیں جوكہ 63 ممالك میں 340 اشاریے استعمال کرتی ہے جسمیں 67% شماریات اور 33% كاروباری شخصیات كے سروے پر مشتمل ہوتی ہے جسمیں چار عوامل اور پانچ فرعی عوامل ہوتے ہیں

  • عالمی مسابقت رپورٹ 4.0

جنیوا سویزرلینڈ سے ورلڈ اکنامک فورم نے عالمی مقابلہ انڈیکس 4.0، شائع كرتی ہے جو ماضی میں شائع کی جانے والی عالمی مسابقتی رپورٹ کو پیش کرتا ہے۔ جی سی آئی 4.0 چوتھے صنعتی انقلاب پر توجہ مرکوز کرتا ہے جیسا کہ ممالک کو مسابقتی ترقی کی راہ پر گامزن کیا جاتا ہے۔ اس رپورٹ میں مسابقت کا مختلف عوامل کے ذریعے مقابلہ کیا گیا ہے جومعیشت کی پیداوری کی سطح کا تعین کرتے ہیں، جیسے2017 کی جی سی آئی میں کیاـ اسی طرح، ڈبلیو ای ایف کے ماہرین نے بتایا ہے کہ "درجہ بندی پچھلی عالمی مسابقتی رپورٹ کے ساتھ موازنہ نہیں ہے"۔ رپورٹ 140 ممالک كا احاطہ كیا گیا ہے جنكے 12 شعبوں ۔ ادارے، انفراسٹرکچر، آئی سی ٹی اپنانے، معاشی استحکام، صحت، ہنروں، مصنوعات کی منڈی، لیبرمارکیٹ، مالیاتی نظام، كاروباری حجم ، کاروباری حرکیات اوراختراع کی صلاحیت۔ اور اس میں 98 اشارئے شامل ہیں جن میں سے 34 اشاروں کو جی سی آر 2017 سے برقرار رکھا گیا ہے 40% فیصد سروے بیانات اور 54% شماریات پر مشتمل ہیں۔

  • بین الاقوامی تجارتی رپورٹ

عالمی اقتصادی فورم کے ذریعہ عالمی سطح پر سالانہ مجاز تجارتی رپورٹ (جی ای ٹی آر) شائع کی جاتی ہے ۔ یہ جائزہ تجارتی اشاریہ (ای ٹی آئی) پر مبنی ہے ، جو معیشتوں كی اداروں ، پالیسیوں ، بنیادی ڈھانچے اور خدمات میں موجود بین الاقوامی سرحدون سے تجارتی سامان کے آزادانہ رسائی کی سہولت فراہم ہوتی ہے۔ یہ رپورٹ چار اہم اجزاء (ذیلی اشاریہ) پر مشتمل ہے: مارکیٹ تک رسائی ، بارڈر ایڈمنسٹریشن ، انفراسٹرکچر ، اور كاروباری ماحول۔ اس سال کی رپورٹ میں 136 اقتصاد كو پركھا گیا جسكیلئے 7شعبوں كے 57 اشارئے استعمال کیے گئے ہیں۔

  • عالمی انفارمیشن ٹیکنالوجی رپورٹ

عالمی انفارمیشن ٹیکنالوجی رپورٹ ورلڈ اکنامک فورم کے ذریعہ شائع کی گئی ہے۔ 2001 سے شائع ہونے والی اس رپورٹ کا مقصد (معاشی ترقی کے لئے) انفارمیشن ٹیكنالوجی كا استعمال کرنے اوراس سے فائدہ اٹھانے کیلئے مختلف ممالک کی استعداد کا جائزہ لینا ہے اور ساتھ ہی بنیادی خدمات تک رسائی کو بہتر بنا کرمعاشرتی ترقی اورتبدیلی کی راہ پرپیش قدمی کرنے کے لئے اور ان کی صلاحیت کا اندازہ کرنا ہے تاکہ خدمات، رابطے میں اضافہ، اور روزگار کے مواقع پیدا ہوں۔ اس سال کی رپورٹ میں 53 اشاریوں میں 139 معیشتوں کی پیمائش کی گئی ہے (51 فیصد شماريات اور 49٪ سروے پر مشتمل ہیں) اور 4 مرکزی ذیلی اشاریوں پر مرتكز ہے۔

  • عالمی خوشی کی رپورٹ

عالمی خوشی کی رپورٹ نیویارک میں اقوام متحدہ کے پائیدار ترقی سلوشنزنیٹ ورک کے زیر اہتمام ہرسال شائع ہوتی ہے۔ اس رپورٹ میں 156 ممالک کی خوشی کی سطح کی پیمائش کی گئی ہے۔ رپورٹ گیلپ كے عالمی سروے پر انحصارکرتی ہے جس میں پوچھا گیا ہے کہ "براہ کرم ایک ایسی سیڑھی کا تصور کریں جس کے نیچے صفراوراوپردس ہے۔ فرض کریں کہ ہم کہتے ہیں کہ سیڑھی کا سب سےاوپرآپ کے لئے بہترین زندگی کی نمائندگی کرتا ہے، اور سیڑھی کا نچلا حصہ آپ کے لئے بدترین زندگی کی نمائندگی کرتا ہے۔ اس وقت آپ سیڑھی کے کس مرحلے پرکھڑے ہیں، یہ فرض کرتے ہوئے کہ آپ اپنی زندگی کے بارے میں جس قدراونچا محسوس کریں گے خوشی محسوس كرینگے، اور جس قدر آپ سیڑھی كے نچلی جانب ہونگے آپ اس کے بارے میں بدتر محسوس کرینگے؟ آپ کون سے مرحلے میں خود كو محسوس کرتے ہی ؟ "۔ اس کے ذریعے، لوگ 0 سے 10 (ہرملک کے لئے، اوسط 3 سال سے زیادہ (یعنی 2015-2017) کے پیمانے پراپنی موجودہ زندگی کے معیارکا جائزہ لیتے ہیں۔

  • پائیدار ترقیاتی اہداف انڈیکس

ایس ڈی جی انڈیکس وڈیش بورڈز جرمنی كے برٹیلسمن اسٹیفٹونگ نیٹورک (ایس ڈی ایس این) سے شائع ہوتا ہے۔ یہ رپورٹ پہلی بار سنہ 2016 میں شائع ہوئی تھی اوراس سال کے ایڈیشن میں 11 پائیدارترقیاتی اہداف پرمحیط 111 اشارے شامل ہیں۔

  • ای گورنمنٹ سروے

ای گورنمنٹ سروے اقوام متحدہ کے محکمہ برائے اقتصادی وسماجی امور (ڈی ای ایس اے) کے پبلک ایڈمنسٹریشن اینڈ ڈویلپمنٹ مینجمنٹ (ڈی پی اے ڈی ایم) کی ڈویژن کے ذریعہ سالانہ شائع کیا جاتا ہے ہے۔ یہ پہلی بار 2003 میں جاری کیا گیا تھا۔ رپورٹ میں 3 اجزاء (آن لائن سروس، ٹیلی مواصلات انفراسٹرکچراور انسانی وسائل) کے 10 اشارے استعمال کرتے ہوئے 193 ممالک کی پیمائش کرتی ہے۔ یہ رپورٹ فیصلہ سازوں کو ای-حکومت میں اپنی طاقت اورچیلنجوں کےعلاقوں کی نشاندہی کرنے اورای-حکومت کی پالیسیوں اورحکمت عملی کی رہنمائی کرنے کا ایک ذریعہ فراہم کرتی ہے۔

  • عالمی صلاحیتی رپورٹ

عالمی صلاحیتی رپورٹ (ورلڈ ٹیلنٹ رپورٹ) انسٹی ٹیوٹ برائے مینجمنٹ ڈویلپمنٹ کے ذریعہ 2013 سے سالانہ شائع ہوتی ہے۔ اس رپورٹ میں اس بات کا اندازہ لگانے كی كوشش ہوتی ہے كہ مختلف ممالک صلاحیتوں میں کس حد تک ترقی کرتے ہیں اور صلاحیت مند لوگوں كو اپنی طرف متوجہ کرتے ہیں یار برقرار رکھتے ہیں ۔ اس سال کی رپورٹ میں 3 اہم عوامل کے ذریعہ 63 ممالک کی پیمائش کی گئی ہے۔ سرمایہ کاری اور ترقی، جازبیت اور تیاری۔ رپورٹ 3 عوامل کے اندرمجموعی طور پر 30 معیارات، جوكہ 60٪ سروے (18 معیارات) اور 40٪ شماریے پر مشتمل ہیں۔

  • انسانی ترقی کی رپورٹ

اقوام متحدہ کا ترقیاتی ادارہ (یو این ڈی پی) انسانی ترقی رپورٹ (ہیومن ڈویلپمنٹ انڈیکس) شائع كرتی ہے۔ انڈیکس تین جہتوں پرانسانی ترقی کی پیمائش کرنے کی کوشش کرتا ہے: ایک لمبی اورصحتمند زندگی، باخبررہنا اورمعقول معیارزندگی گزارنا۔

  •  رپورٹ 188 ممالك كیلئے چار مقداری اشارے استعمال كرتی ہے۔
  1. اوسط عمر
  2. اوسط تعلیمی سال ۔
  3. اسکول کی تعلیم کے متوقع سال۔فی كس مجموعی قومی آمدن ($ پی پی پی)
  4. فی كس مجموعی قومی آمدن ($ پی پی پی)
  • آئی سی ٹی ترقیاتی اشاریہ

آئی سی ٹی ڈویلپمنٹ انڈیکس (ترقیاتی اشاریہ) انفارمیشن سوسائٹی کی رپورٹ كو جانچنے كے بنیادی عناصر میں سے ایک ہے، جو بین الاقوامی ٹیلی مواصلات یونین کے ذریعہ سالانہ 2009 سے شائع ہوتی ہے۔ یہ دنیا بھر کی 176 معیشتوں میں آئی سی ٹی ترقیوں کی سطح كا احاطہ کرتا ہے۔ رپورٹ میں 3 ذیلی اشاریوں (آئی سی ٹی رسائی، آئی سی ٹی استعمال اور آئی سی ٹی مہارت) کے ذریعے ممالک کے مابین آئی سی ٹی میں ہونے والی پیشرفت کا اندازہ کیا گیا ہے جس میں 11 اشارے شامل ہیں۔

  • لاجسٹک پرفارمنس انڈیکس

لاجسٹک پرفارمنس انڈیکس (رسد كاركردگی) عالمی بینک کے ذریعہ ہر دوسال بعد شائع ہوتا ہے۔ لاجسٹک پرفارمنس انڈیکس ممالک کو تجارتی رسد پر اپنی کارکردگی میں ان چیلینجز اورمواقع کی نشاندہی کرنے میں مدد کرتا ہے جسمیں وہ اپنی کارکردگی کو بہتر بنا سکتے ہیں۔ اس رپورٹ میں 160 ممالک کو جانچا گیا ہے۔ ایل پی آئی زمینی طور پر آپریٹرز کے ایک عالمی سروے پر مبنی ہے (عالمی مال بردار آگے بڑھانے والے اورایکسپریس کیریئر)، جس ملک میں وہ چل رہے ہیں اورجس کے ساتھ وہ تجارت کرتے ہیں ان کی رسد "دوستی" پر رائے مہیا کرتی ہے۔ وہ ان ممالک کے بارے میں گہرائی سے آگاہ کرتے ہیں جس میں وہ دوسرے ممالک کے باخبر معیار کی جانچ پڑتال کرتے ہیں جہاں وہ تجارت کرتے ہیں اورعالمی لاجسٹک ماحول کا تجربہ کرتے ہیں۔ آپریٹرز کی رائے کو کام کے ملک میں لاجسٹک چین کے کلیدی اجزاء کی کارکردگی پر مقداری اعداد وشمارکےساتھ پورا کیا جاتا ہے۔ ایل پی آئی اس وجہ سے دونوں ہی معیار اورمقداری اقدامات پرمشتمل ہے اور ان ممالک کے لئے رسد دوستی کے پروفائل بنانےمیں مدد کرتا ہے۔ یہ ایک ملک کے اندررسد کی فراہمی کے سلسلے میں کارکردگی کی پیمائش کرتا ہے اور دو مختلف بین الاقوامی اور ملکی تناظر پیش کرتا ہے ۔

  • وفاقی نظام
  • وفاق کے مقاصد:

وفاق کا مقصد اپنی آزادی اورخودمختاری کو برقرار رکھنا، اس کی سلامتی اوراستحکام کا تحفظ کرنا، اپنے وجود یا اس کے ممبر امارتوں کے وجود کو کسی بھی جارحیت سے بچائے ركھنا اور فیڈریشن کےعوام کےحقوق اورذمہ داریوں کا تحفظ کرنا ہے۔ اس کا مقصد امارت کے تمام شہریوں كیلئے بہتر زندگی کی فراہمی اور تمام امارات کی ترقی اور مشترکہ فائدے کے لئے قریبی تعاون سے کام کرنا ہے، تمام امارتوں كے درمیان باہمی احترام اور آئین کے دائرہ کار میں اپنے اندرونی معاملات سے متعلق امور میں دوسرے امارات کی خودمختاری اور آزادی كو یقینی بنانا ہے۔

  • متحدہ عرب امارات میں وفاقی حکام:
  • فیڈرل سپریم کونسل۔
  • صدر اور نائب صدر۔
  • کابینہ۔
  • فیڈرل نیشنل کونسل۔
  • فیڈرل جوڈیشل اتھارٹی۔

متحدہ عرب امارات كی ہر امارت ان تمام شعبوں كے اقتدار کو سنبھالے گا جوآئین کے تحت وفاق کو تفویض نہیں کیے گئے ہیں۔ مزید برآں ہرامارات آئین کی تشكیل اورحفاظت کے ساتھ ساتھ اس کی خدمات سے استفادہ کرنے میں بھی حصہ ڈالے گی۔ وفاق کے تمام ممبرامارات تمام شعبوں میں اپنے معیارکو حاصل کرنے کے لئے قانون سازی ہم آہنگ بنانے کی کوشش کریں گی۔



ٹول ٹپ